سیلاب کی تباہ کاریوں سے آبی مخلوق بھی محفوظ نہ رہی، کروڑوں کی ٹرائوٹ مچھلیاں مر گئیں

سوشل میڈیا‎

پشاور(این این آئی) وادی سوات کی تحصیل مدین میں حالیہ سیلاب سے فش فارمز سیلابی ریلے کی نذر ہوگئے اور 3 لاکھ سے زائد بڑی ٹراؤٹ مچھلیاں مرگئیں جس کے نتیجے میں فش انڈسٹری کو بڑا دھچکا لگا ہے اور کروڑوں کا نقصان ہوگیا۔نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے مدین میں فش فارمز کے مالکان نے بتایا کہ ان کے فش فارمز سے لاکھوں مچھلیاں مرگئیں اور ہزاروں بچے پانی کی نذر ہوگئے جس سے ان کا لاکھوں کا نقصان ہوا جبکہ فش فارم بھی مکمل طور پر تباہ ہوگئے۔مقامی لوگوں کے مطابق ٹراؤٹ کے

تالابوں میں سیلابی پانی داخلہونے سے ان کی زندگی کو خطرہ لاحق ہوگیا جس کے باعث فش مالکان نے مچھلیاں کو بازاروں میں لاکر بیچنا شروع کردیا ہے جس کے نتیجے میں ٹراؤٹ کی قیمت 3 ہزار روپے کلو سے کم ہوکر 5 سو روپے فی کلو ہوگئی ہے۔لینڈ سلائیڈنگ کے باعث راستے خراب ہونے سے مچھلیوں کی ترسیل ناممکن ہوگئی اور سڑنے کے ڈر سے بیشتر فش فارمز میں مرنے والی مچھلیاں مقامی دیہاتیوں میں بانٹ دی گئیں۔متاثرہ کاروباری طبقے نے حکومت سے نقصان کا ازالہ کرنے کی اپیل کی ہے۔

کلک ٹو کمنٹ ‎

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

تازہ ترین‎

اوپر